مباحث (24)

  وقت اشاعت: 12 2017

کیا میاں نواز شریف کی قیادت میں مسلم لیگ نواز اور ریاستی اسٹیبلشمنٹ کے مابین اختلافات ناقابل حل ہونے کی سطح تک پہنچ چکے ہیں۔ یا اختلافات کی نوعیت ہی ایسی ہے کہ کوئی بھی اپنے نام نہاد اصولی موقف سے پیچھے ہٹنے کو تیار نہیں۔ اگر ان مفروضوں کو من وعن تسلیم کر لیا جائے تو سوال اٹھتا ہے کیا میاں نواز شریف کی قیادت میں نواز لیگ کے نام نہاد ‘مزاحمتی دھڑے‘ میں اتنا دم خم اور تنظیمی و سیاسی صلاحیت موجود ہے کہ وہ  مزاحمتی تحریک  کے ذریعے منزل مقصود حاصل کرنے میں کامیاب ہو جائیں گے۔ یا مقتدر حلقے میاں نواز شریف اور نواز لیگ کو سیاسی عمل سے خارج کرکے تاریخ کا حصہ بنانا چاہتے ہیں۔ ان سوالوں کا جواب پانے کے لئے نواز شریف کی سیاسی زندگی پر ایک طائرانہ نظر ڈالنا پڑے گی۔  

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 22 ستمبر 2017

‘دبنگ کمانڈو‘ نے بے مثال بہادری کا مظاہرہ کرتے ہوئے بالآخر بے نظیر بھٹو کے قاتل کو بے نقاب کر ڈالا۔ بے نظیر قتل میں مفرور ملزم کمانڈو مشرف کی دبنگ دلیری نے اس وقت کروٹ لی جب پیپلز پارٹی نے ہائی کورٹ اپیل میں مشرف کو سزائے موت دینے کی استدعا کر ڈالی۔ مشرف کے منطق کے کیا کہنے کہ آصف زرداری نے اسے سزائے موت دلانے کی اپیل دائر کی ہے، اس لئے میں اعلان کرتا ہوں کہ زردای ہی بے نظیر کا اصلی قاتل ہے۔ کمانڈو کی یادداشت کا بھی جواب نیہں کہ اسے سال ہا سال اقتدار میں رہنے کے بعد اب یہ بھی یاد آگیا کہ مرتضیٰ بھٹو کا قاتل بھی زرداری ہی ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 28 جولائی 2017

میاں کو بکری چوری کی سزا کے بعد ،  خان مرغی چوری سزا کیلئے تیار رہیں۔

آئین میں اٹھارویں ترمیم کے وقت سینیٹر رضا ربانی نے آرٹیکل 62 اور 63 میں ترمیم کرنے پر بھی زور دیا تھا۔ رضا ربانی کا کہنا تھا کہ یہ آرٹیکل غیرمنتخب طاقتوراداروں کے ہاتھوں میں جمہوری اداروں کے خلاف ایک موثر ہتھیار بنیں گے۔ یہ آریٹکل منتخب جمہوری اداروں کے استحکام اور بالادستی کی راہ میں رکاوٹ ہیں اورطاقتوراسٹیبلشمنٹ بڑی آسانی سے ان کے سہارے منتخب اداروں اور حکومتوں کو اپنی ماتحتی میں لا سکتی ہے۔ پیپلز پارٹی اس پر تیار تھی مگر نواز لیگ راضی نہ ہوئی۔ کیونکہ نواز شریف اپنے حمائتی مذہبی حلقوں کو ناراض نہیں کرنا چاہتے تھے۔ بالآخر نواز شریف پر 62 کی تلوار چلی اور وہ نااہل قرار پا کر وزیراعظم ہاؤس سے جاتی عمرہ بجھوا دیئے گئے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 15 جولائی 2017

دروغ برگردن راوی کہ سعودی شہنشاہ اپنے سابق زیرکفالت نواز شریف کو گستاخی کی سزا دینا چاہتے ہیں۔ اس کے اشارے تو اس وقت نظر آنا شروع ہو گئے تھے جب ٹرمپ کی زیر صدارت عرب اسلامی کانفرنس میں پاکستانی وزیرآعظم نواز شریف کو نظر انداز کرکے سابق پاکستانی آرمی چیف راحیل شریف کو زیادہ اہمیت دی گئی۔ شہنشاہ کی ناراضی بجا کہ نواز شریف نے ٹرمپ اور بادشاہ سلامت کی ہاں میں ہاں ملاتے ہوئے ایران کو سب سے بڑا دہشت گرد کیوں قرار نہ دیا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 03 جون 2017

نوازشریف اورآصف زرداری کو ڈاکو اورچور جیسے القابات سے مخاطب کرنا عمران خان کے سیاسی کھیل کا اٹیک باؤنسر رہا ہے۔ مگرعوام عمران خان سے یہ پوچھنے کا حق رکھتے ہیں کہ ڈاکوؤں اور چوروں کے جمگھٹے میں چہچہانے والا، ان کی کرپشن کو ڈرائی کلین کرکے لوٹ مار کی دولت سے سیاست چمکانے والا کس لقب سے نوازا جانا چاہئے۔ یہاں تو صرف یہ کہا جا سکتا ہے کہ پاکستانی سیاسی حمام میں سب ہی ننگے ہیں۔ سب نے ایک دوسرے کو بے لباس کیا اور اب ستر پوشی کے لئے کسی کے پاس کچھ نیہں بچا۔ 

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 28 مئی 2017

ٹرمپ کی ہدایتکاری میں امریکی عرب اتحادی سرکس نے مذہبی انتہا پسندی کے خلاف اعلان جہاد کر تے ہوئے ایران کو مذ ہبی انتہا پسندی کا منبع قرار دیا ہے۔ سعودی عرب کو اس انتہا پسندی کا مقابلہ کرنے کے لئے ایک سو دس ارب ڈالروں سے زیادہ کا امریکی اسلحہ چاہئے اور امریکہ کو سینکڑوں ارب ڈالروں کی سعودی انویسٹمنٹ یعنی مدد درکار ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 19 اپریل 2017

ریفرینڈم میں معمولی اکثریت حاصل کرنے پر ترکی کا  ‘نیا سلطان‘ طیب اردوان بظاہر بہت خوش نظر آرہا ہے۔ اردوان کو اس کامیابی پر مبارکباد دینے والوں میں امریکی صدر ٹرمپ، سعودی بادشاہ اور پاکستان کے وزیراعظم نواز شریف پیش پیش ہیں۔ مگر جمہوری ممالک میں عمومی طور پر ریفرینڈم کی شفافیت اور ترکی کے جمہوری مستقبل پر سوالات اٹھائے جارہے ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 03 اپریل 2017

ساری دنیا انتہا پسندی اور شدت پسندی کی لہر کی لپیٹ میں ہے۔ کرہ ارض کا کوئی حصہ اس مرض سے محفوظ نہیں رہا۔ ایشیا ہو یا یورپ، امریکہ ہو یا افریقہ کوئی خطہ بھی انتہا پسندی کی غیر انسانی ہواؤں سے محفوظ نیہں۔ مختلف ممالک میں انتہا پسندی کا جنون الگ الگ اشکال میں ظاہرہو رہا ہے۔ کہیں یہ جنون مذہبی شدت پسندی کی صورت میں ابھرتا ہے تو کہیں کٹر قوم پرستی اور تنگ نظر نسل پرستی کا روپ اختیار کر لیتا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 19 مارچ 2017

بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح نے 11 اگست 1947 کو پاکستان کی پہلی آئین ساز اسمبلی کے اجلاس میں اسمبلی کے پہلے صدر اور نامزد گورنر جنرل کی حثیت سے نئی مملکت پاکستان کے آئینی، قانونی، سیاسی، مذہبی اور سماجی بیانیہ کے خدوخال واضع کر دیئے تھے۔ قائد کا آئین ساز اسمبلی سے یہ خطاب پاکستان کے مجوزہ آئین سے متعلق ایک سوچا سمجھا پالیسی ساز بیانیہ تھا۔   

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 29 2016

سابق صدرآصف علی زرداری اور پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو نے موجودہ قومی اسمبلی میں جانے کا اعلان کرکے، اس قومی اسمبلی اور نواز حکومت کو پانچ سال پورے کرنے کا لائسینس جاری کردیا ہے۔ ساتھ ہی بلاول بھٹو نے حکومتی پالیسیوں پر کڑی تنقید کرتے ہوئے، اپنے چار مطالبات کی منظوری کے لئے سیاسی لانگ مارچ کرنے، عوامی جلسوں اور رابطہ مہم سے حکومت پر دباؤ بڑھانے کا عندیہ بھی دیا ہے۔  

مزید پڑھیں

Praise and prayers for the great people of Turkey

One year ago, this day, the people of Turkey set an example by defending their elected government and President Recep Tayyip Erdogan against military rebels.

Read more

loading...